89

انڈیاکے سیاستدان پاکستان کی مدد کررہے ہیں، نریندرمودی بوکھلا گئے، لکھنو میں کشمیریوں پر حملہ کرنےوالوں کوکیا کچھ کہہ دیا؟

انڈیا (ویب ڈیسک ) ہندوستانی وزیراعظم نریندر مودی نے الزام لگایا ہے کہ انڈیا کی سیاسی جماعتوں کے رہنما کشیدگی کے موجودہ ماحول میں بھی پاکستان کو مدد فراہم کرر ہے ہیں ۔کانپور کے ریلوے میدان میں عوامی جلسے سے خطاب کرتے ہوئے ہندوستانی وزیر اعظم نریندر مودی نے کہا کہ کچھ لوگ ہندوستانی فضائیہ کے اسٹرائیک کو کمتر دکھانے کے لئے دن رات کوششیں کرر ہے ہیں۔سیاسی مفاد کیلئے جسطرح کی بیان بازی کی جارہی ہے اس سے دشمن ملک کی مدد کی جا رہی ہے ۔ ایسی باتیں کرنے والے سیاسی لوگوں کو شرم آنی چاہئے ۔ پاکستان کو
جو پسند آئے ایسی باتیںبھار میں بیٹھ کر کرنے والوں کو عوام کبھی بھی معاف نہیں کرے گے ۔ انہوں نے کہا کہ الیکشن تو آئنگے اور چلے جائینگے لیکن بے تکی بیان بازی کا فائدہ ملک کے دشمنوں کو نہ ملے یہ ذمہ داری ہر پارٹی کی ہے ۔انہوں نے کہا کہ پاکستان پر پوری دنیا کا دبا ؤہے، دہشت گردی کے معاملے میں پڑوسی ملک رنگے ہاتھوں پکڑا گیا ہے ، وہ اب کسی کو منہ دکھانے کے لائق نہیں رہ گیا ہے لیکن ہمارے لوگوں کے بیان پاکستان کو مدد فراہم کرر ہے ہیں۔ ان بیانوں کی بنیاد بنا کر وہ دنیا کے سامنے صفائی پیش کرتا گھوم رہا ہے، یہ سخت گناہ کچھ پارٹیوں کے لیڈروں کے ذریعہ کیا جارہا ہے ۔ وزیر اعظم نریندر مودی نے کہا کہ سرحد سے منصوبہ بند دہشت گردی کے خلاف فیصلہ کن لڑائی حکومت لڑ رہی ہے ، دہشت گرد اور اس کے آقا اپنا خاتمہ سامنے دیکھ رہے ہیں ان کے حواس باختہ ہیں، جس کا نتیجہ ہے کہ جمعرات کو جموں میں حملہ کرنے کی کوشش کی گئی۔ دہشت گردوں کی بوکھلاہٹ فطری ہے ، ان کو پالنے پوسنے والوں کی بھوکھلاہٹ سامنے آئے گی۔ ایسے میں ملک کے ہر شہری کو محتاط رہتے ہوئے ملک کے تئیں اپنے فرض کو نبھانے کی ضرورت ہے ، ہندوستانی وزیراعظم نے انڈیا کی تمام ریاستی حکومتوں سے کہا ہے کہ وہ ان عناصر کیخلاف سخت کارروائی کرے، اگر کہیں کسی کشمیری پر حملہ ہوتا ہے۔لکھنو میں حملہ آوروں کوپاگل لوگ قرار دیتے ہوئے انہوں نے لکھنو واقعہ کے حوالے سے کہا یہ بات ضروری ہے کہ ملک میں بھائی چارہ کا ماحول قائم رکھا جائے۔انہوں نے کہا کہ اتر پردیش سرکار نے فوری کارروائی کرتے ہوئے کچھ پاگل لوگوں کے خلاف کارروائی کی ہے جنہوں نے ہمارے کشمیری بھائیوں پر حملہ کیا تھا۔ وزیر اعظم نے کہا میں تمام ریاستوں سے اپیل کرتا ہوں کہ جہاں کہیں بھی ایسا کوئی واقعہ پیش آئے تو سخت کارروائی کی جائے۔ انکا کہنا تھا کہ دہشت گردی کا دائرہ تنگ کرنے اور ان کے سرپرستوں کو سبق سکھانے کے لئے سماجی ہم آہنگی اور بھائی چارے کو قائم رکھنے کی سخت ضرورت ہے ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں