487

کریسٹ چرچ حملے میں دہشت گرد کی بندوق پر کئی نام لکھے تھے، یہ نام کس کے ہیں؟ حیرت انگیز انکشاف

کریسٹ چرچ (مانیٹرنگ ڈیسک ) نیوزی لینڈ کے شہر کریسٹ چرچ کی النورمسجد اور لِین وڈ میں رونماہونے والا خوفناک واقع مسجد میں جمعہ کی نماز کے دوران سفید فام دہشت گرد نے حملہ کیا جسکے نتیجے میں شہید ہونے والے افراد کی تعداد 49 ہو گئی ہے جبکہ دہشتگردی کی اس کارروائی میں شہدا کی تعداد میں مزید اضافے کا خدشہ ہونے کا اندیشہ کیا جا رہا ہے۔ حملہ آور سے متعلق اب تک موصول ہونے والی اطلاعات کے مطابق آسڑیلوی شہری ہے جس کی شناخت برینٹن ٹیرینٹ سے نام سے ہوئی ہے۔حملہ آورفوجی وردی میں ملبوس تھا۔ جس کی عمرتیس سے چالیس سال ہے جبکہ ایک عورت سمیت اسکے چار ساتھی شہر کے دوسرے علاقوں سے گرفتار ہوئے۔ امریکی نشریاتی ادارے کے مطابق ملزم نے اپنے سوشل میڈیا اکاﺅنٹ سے اسلام مخالف مواد کے87 صفحات پوسٹ کیے جنمیں لوگوں کو مسلمانوں پر حملوں کے لیے اُکسایا گیا تھا۔ ٹویٹر پر جاری پیغام میں حملہ آور نے بتایا کہ میری عمر 28 سال ہے اور میں آسٹریلیا میں پیدا ہوا۔ میرا تعلق ایک متوسط خاندان سے ہے۔ میں ایک عام خاندان کا ایک عام سفید فام شخص ہوں جس نے اپنے لوگوں کے محفوظ مستقبل کے لیے یہ قدم اُٹھایا۔واضح رہے کہ حملہ آور نے مسجد میں موجود عام نمازیوں پر اپنی مشین گن سے اندھا دھند فائرنگ کی۔ حملہ آور کی مشین گن پر ماضی میں مسلمانوں پر حملے کرنے والے دہشتگردوں کے نام بھی تحریر تھے جو غالباً اُس نے خود تحریر کیے تھے۔ واضح رہے کہ نیوزی لینڈ کی 2 مساجد میں آج ایک حملہ آور نے نمازیوں پر فائرنگ کر دی جس کے نتیجے میں بیس سے زائد افراد کے شہید ہونے کی اطلاعات ہیں تاہم ایک حملہ آور نے قتل و غارت کو سوشل میڈیا پر براہ راست دکھانے کی کوشش بھی کی ۔غیر ملکی ویب سائٹ ” ڈیلی میل “ نے اپنی رپورٹ نے دعویٰ کیاہے کہ ایک دہشتگردی نے النور مسجد کے اندر سے فائرنگ کرتے ہوئے لائیو سٹریمنگ بھی کی ، یہ واقع دوپہر ڈیڑھ بجے پیش آیا جس وقت جمعہ کی نما ز کی ادائیگی کا وقت ہو رہا تھا اور شہری نماز جمعہ اداکرنے مساجد میں‌موجود تھے.

Facebook Comments

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں