86

سپریم کورٹ نے مرغی چوری کے الزام میں‌گرفتار چور کی ضمانت مسترد کر دی

اسلام آباد(مانیٹرنگ ڈیسک) سپریم کورٹ آف پاکستان نے مرغا چوری کرنے کے الزام میں گرفتار شخص کی ضمانت کی درخواست مسترد کردی، ملزم پہلے بھی سزا پا چکا ہے ۔پرائیویٹ‌میڈیا کے مطابق سپریم کورٹ آف پاکستان میں سماعت کے دوران جسٹس مشیر عالم کی سربراہی میں 2 رکنی بنچ نے ملزم زاہد کی ضمانت کی درخواست پر سماعت کی۔ دوران سماعت ایڈووکیٹ جنرل اسلام آباد نے عدالت کو بتایا کہ ملزم چار مقدمات میں پہلے بھی سزایافتہ ہے، اس کی تحویل سے ڈسپنسر،ایل سی ڈی،کمپیوٹر،لیپ ٹاپ،جیولری اور دیگر کئی اشیا برآمدہوئی ہیں۔ ساتھ ہی ساتھ ملزم کے پاس سے نقب زنی کے آلات بھی برآمدہوئے ہیں۔کیس کی سماعت کے دوران جسٹس قاضی فائز

عیسیٰ نے ملزم کے وکیل سے استفار کیا کہ آپ کا موکل کیا کرتا ہے تو وکیل مدعی نےاپنے بیان میں کہا کہ میرا موکل ایک مزدور پیشہ ہے۔وکیل کے جواب پر عدالت نے سوال کیا کہ پولیس کوآپ کے موکل سے ایسی کیانفرت تھی جو اسے بلا سبب نامزد کردیا گیا،کیاپولیس نے یہ سب چیزیں بازارسے خریدکربرآمدکرائیں۔ اس دوران تفتیشی افسر نے اپنے بیان میں بتایا کہ ملزم کے گھرسے چوری کے مال کاآدھاٹرک برآمدکیاگیا۔پولیس کے موقف پر عدالت نے کہا کہ اخبارمیں خبرتوصرف ایک معمولی نوعیت کی مرغی چوری کی لگوائی گئی تھی اور ملزم کے گھرسے توچوری کے مال کاآدھاٹرک برآمدہوا ہے۔ جسٹس قاضی فائز نے یہ بھی کہا کہ اخبارمیں ایسی چیزیں دیکھ کر لوگ چونک جاتے ہیں،جب کیس سامنے آتاہے توحقیقت کاپتہ چلتاہے۔2 رکنی بنچ نے ملزم کے وکیل کی جانب سے دائر کردہ ضمانت کی درخواست مسترد کرتے ہوئے ٹرائل کورٹ کومعاملے کاتین ماہ میں فیصلہ کرنے کاحکم جاری کردیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں