57

نیوزی لینڈ دہشتگری کی کاروائی پر، یوٹیوب، ٹوئٹر، فیس بک اور مائیکروسافٹ کے سربراہان طلب

یارک(مانیٹرنگ ڈیسک)سانحہ کرائسٹ چرچ نیوزی لینڈ کی ویڈیو وائرل ہونے پر سوشل میڈیا کمپنیوں سے وضاحت اور جواب مانگ لیا گیا،امریکی ایوان کی ہوم لینڈ سیکیورٹی کمیٹی نے فیس بک، ، ٹیوٹر، مائکروسافٹ اور یوٹیوب کے سربراہان کو 27 مارچ کو طلب کر لیا ہے۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق سانحہ نیوزی لینڈ کی براہِ راست ویڈیو فیس بک پر بہت کم صرف 200 افراد نے دیکھی تاہم اسے بڑی تعداد میں کاپی کر کے دوبارہ پوسٹ کیا گیا اور سوشل پلیٹ فارمز اسے پھیلنے سے نہ بچا سکے۔وائرل ہونے کے سبب سانحہ نیوزی لینڈ کی ویڈیو کروڑوں افراد نے دیکھی ہے۔فیس بک کی انتظامیہ کا کہنا تھاکہ فیس بک سے 15 لاکھ ویڈیوز کو ہٹا دیا گیا ہے۔تاہم 27 مارچ کو طلب کر لیا گیا انہیں.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں